قبلۂ اول و ارضِ فلسطین کے تحفظ کے لئے آواز بلند کرنا ہمارا ملی فریضہ ہے ✍🏻 مفتی محمّد اسماعیل قاسمی اسرائیلی جارحیت کا منہ توڑ جواب اس کی مصنوعات کا بائیکاٹ ہے

( سرزمین بنگلہ دیش) بیت المقدس جسے مسلمانوں کا قبلہ اول ہونے کا شرف حاصل ہے. اور تقریباً 17 ماہ تک جناب محمدﷺ نے اس کی جانب منہ کر کے نماز پڑھی ہے. یہ ہر زمانے میں یہودیوں کے نرغے میں رہا ہے. سب سے پہلے حضرت عمر فاروقؓ نے اسے فتح کیا اور اس کے بعد سلطان صلاح الدین ایوبیؒ نے یہودیوں کے تسلط سے آزاد کرایا. آج ایک بار پھر قبلۂ اول اور ارض فلسطین یہودیوں کے شکنجے میں ہے اور مسجد اقصی ہمیں پکار رہی ہے کہ اے مسلمانوں میں وہی سرزمین ہوں جہاں سے نبی آخر الزماں معراج پر تشریف لے گئے. میں وہ عمارت ہوں جہاں سرکار دو عالم کو امام الانبیاء کا شرف حاصل ہوا. ارض فلسطین آواز دے رہی ہے کہ اے عالم اسلام میں وہی سرزمین ہوں جسے اللہ پاک نے اپنے کلام میں بابرکت سرزمین سے یاد کیا ہے. آج ایک بار پھر اہل یہود مجھ پر نا جائز قبضہ جمانے جا رہے ہیں. اس ناپاک قدم کے خلاف آواز بلند کرنا ہمارا ملی فریضہ ہے. حالیہ دنوں امریکی متنازعہ صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے یروشلم کو اسرائیل کی راجدھانی تسلیم کرنے اور اپنا سفارت خانہ یروشلم میں منتقل کرنے کا اعلان کیا ہے. جس کے خلاف اہل اسلام کے ساتھ دنیا کے بیشتر انصاف پسند ممالک بھی ہیں اور گزشتہ روز سی آئی او کے اجلاس میں امریکی تجویز کی مخالفت میں ووٹنگ کی گئی. جس پر امریکہ نے دادا گیری کرتے ہوئے ویٹو کردیا. آج اہل فلسطین صدیوں سے قبلہ اول کے تحفظ کے لئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرتے آرہے ہیں. ایسے وقت میں جب کہ ان پر ایک مرتبہ پھر مصیبتوں کا سلسلہ شروع ہوا ہے ان کے حق میں دعا کرنا اور ان کے حق میں آواز بلند کرنا وقت کی بہت بڑی ضرورت ہے. اسی طرح اسرائیلی معیشت کو کمزور کرنے اور اظہارِ نفرت کے لئے اس کی مصنوعات کا بائیکاٹ بھی ضروری ہے. ماضی میں بھی ہم نے عہد کیا تھا کہ اسرائیلی مصنوعات کا استعمال نہیں کریں گے.. اب ایک مرتبہ پھر شد و مد کے ساتھ ہمیں اسرائیل اور امریکہ کے خلاف اظہارِ ناراضگی کے لئے اس کی مصنوعات کا مکمل بائیکاٹ کرنا ہے اور دنیا کو یہ بتانا ہے کہ ہم اپنے مظلوم بھائیوں اور مقدس سرزمین کے لئے بیدار ہیں. آج امت مسلمہ کو اتحاد کی ضرورت ہے تاکہ باطل طاقتوں کو زیر کیا جا سکے. اتحاد و اتفاق کے ساتھ ہمیں فلسطین اور قبلہ اول کے ساتھ اظہارِ یکجہتی کی اشد ضرورت ہے. ہم عالم اسلام خصوصاً اپنے شہر اور ملک کے ہر انصاف پسند شہری سے اپیل کرتے ہیں کہ فلسطینیوں کے حق میں انسانیت کی بنیاد پر متحد ہوکر آواز بلند کریں. قبلہ اول اور ارض فلسطین کے تحفظ کے لئے صرف فلسطینی مسلمان ہی ذمہ دار نہیں ہیں جو روزانہ اپنی جانوں کی قربانی پیش کر رہے ہیں بلکہ اس مقدس مقام کے لئے ہمیں بھی آگے آنا ہوگا.