ٹرمپ کے اعلان سے عالمی اوباشوں کی نئی چالوں کا آغاز ہو چکا: ہانیہ

غزہ7دسمبر:اسلامی تحریک مزاحمت ’حماس‘ کے سیاسی شعبے کے سربراہ اسماعیل ہانیہ نے کہا کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے مقبوضہ بیت المقدس کو صہیونی ریاست کا دارالحکومت قرار دینے سے نہ صرف فلسطین بلکہ پورے خطے میں عالمی اوباشوں کے ایک نئے کھیل کا آغاز ہو چکا ہے۔قطر کے الجزیرہ ٹی وی چینل سے بات کرتے ہوئے اسماعیل ہانیہ نے کہا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ نے تاریخ کی خوفناک حماقت کی ہے جس کے نتیجے میں خطے میں خوفناک تبدیلیوں کی ایک نئی روایت قائم ہو سکتی ہے۔ یہ خوفناک تبدیلیاں نہ صرف فلسطین اور قضیہ فلسطین کے حوالے سے ہوسکتی ہیں بلکہ پورے خطے کواپنی لپیٹ میں لے سکتی
ہیں۔جس سے خوفناک نتائج بھگتنے ہوں گے ۔ انہوں نے کہ امریکی صدر کا اقدام غیرمتوقع نہیں بلکہ یہ تاریخ کی بدترین جوئے بازی اور فلسطینیوں کے ساتھ دھوکہ ہے۔ امریکیوں کو اس اقدام کے رد عمل کا اندازہ نہیں۔ اس کے رد عمل میں پورے خطے میں تشدد کی ایک خوفناک لہر اٹھ سکتی ہے۔اسماعیل ہانیہ نے اس طرف عالمی برادری کو متوجہ کیا امریکہ کے احمقانہ فیصلہ کے نتیجہ میں نہ صرف یہ کہ خطہ میں بدامنی پیدا ہوگی ؛ بلکہ اس سے دنیا کی تاریخ میں بھی اس کے بدترین نتائج سامنے آئیں گے ، تاہم امریکی وزیر خارجہ نے اس سلسلے میں کہا کہ امریکہ اپنے امن کی پالیسوں پر قائم ہے ؛ لیکن یہ ان کی بدعقلی اور غیر مرئی خداکے فرمان کی بجاآوری ہے کہ وہ نقض امن کے عمل کو امن سازی سے تعبیر کر رہے ہیں ۔