مائک پر نماز تراویح پڑھانا جس سے آواز باہر جائے مناسب نہیں ہے

کیوں کہ سجدۂ تلاوت واجب ہے اوراس کاترک کرناگناہ ہے
از: مفتی سہیل احمد قاسمی مفتی امارت شرعیہ پھلواری شریف، پٹنہ
قرآن کریم میںچودہ ایسی آیتیں ہیں،جب انہیں پڑھاجائے خواہ نمازمیںپڑھاجائے یاخارج نماز،آیت سجدہ کی تلاوت کی جائے یاکسی سے سناجائے،یہ پڑھنااورسننابلاقصدوارادہ ہی کیوں نہ ہو،سجدہ کرناواجب ہے،جس کوسجدۂ تلاوت کہاجاتاہے۔
سجدۂ تلاوت حضرت امام اعظم ابوحنیفہ رحمۃاللہ علیہ کے نزدیک پڑھنے اورسننے والے دونوں پرواجب ہے،بخاری ومسلم شریف کی روایت ہے:
’’حضرت ابن عمررضی اللہ عنہما بیان کرتے ہیں کہ ’’رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم جب سجدہ کی آیت پڑھتے اورہم لوگ آپ کے پاس موجودہوتے توآپ بھی سجدہ کرتے اورآپ کے ساتھ ہم بھی سجدہ کرتے،اس وقت ولوگں کی اس قدربھیڑہوتی کہ ہم میںسے بعض کوتوسجدہ کرنے لیے اپنی پیشانی کوٹیکنے کی جگہ نہ ملتی‘‘۔
اس سے سجدہ ٔ تلاوت کی اہمیت کااندازہ لگایاجاسکتاہے کہ حضوراکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ سجدۂ تلاوت کی سعادت حاصل کرنے کے لیے اس قدرلوگ جمع ہوجاتے کہ جگہ تنگ ہوجاتی۔سجدۂ تلاوت قاری اورسامع دونوں پرواجب ہوتاہے،حضرت ابن عمررضی اللہ عنہما سے روایت ہے ،وہ بیان کرتے ہیںکہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہمارے روبروقرآن پاک پڑھتے ہوئے جب سجدہ کی آیت سے گزرتے تو کھڑے ہوتے اوراللہ اکبرکہتے ہوئے سجدہ میںجاتے اورآپ کے ساتھ ہم بھی سجدہ کرتے۔(مشکوٰۃ شریف)
شیخ الاسلام علامہ ابن ہمام فرماتے ہیںکہ آیات سجدہ تین حالتوں سے خالی نہیں:(۱)یاان میںسے سجدہ کاامرہے،(۲)یاکفارکاسجدہ سے انکارکرنے کاتذکرہ ہے،(۳)یاانبیاء کے سجدہ کاواقعہ ہے اورامرکی تعمیل بھی واجب ہے ،کفارکی مخالفت بھی اورانبیاء کی اقتداء بھی۔(فتح القدیر)
اسی لیے تراویح کی نماز اس طرح مائک کے ذریعہ پڑھناکہ جس سے آوازمسجدسے باہرجائے بہتراورمناسب نہیںہے،اس میںکئی خرابیاں ہیں،آیت سجدہ سننے والوں پربھی سجدۂ تلاوت واجب ہوگااوراکثر باہر کے لوگ عدم واقفیت کی وجہ سے سجدۂ تلاوت نہیںکرسکیں گے اورترک واجب کی وجہ سے گنہگارہوں گے،گھروں میںخواتین نمازوتلاوت وغیرہ کااہتمام کرتی ہیں،انہیں اس سے خلل ہوگا اور خصوصا نمازپڑھنے میںانہیں دشواری ہوگی۔
قرآن کی عظمت کاتقاضہ یہ ہے کہ جب اس کی تلاوت کی جائے توتوجہ اورادب واحترام کے جذبہ سے سنا جائے؛لیکن جولوگ مسجدسے باہرہیں،وہ اپنی بہت ساری ضروریات میںمشغول رہتے ہیںاورقرآن کی عظمت کاخیال نہیںرکھ پاتے جویقیناًنقصاندہ ہے۔لہذا اسطرح نمازتراویح مائک سے پڑھاناجس سے آوازدورتک جائے،بہت سارے لوگوں کے لیے ترک واجب کاذریعہ ہے،جوباعث گناہ ہے،اس لیے اس سے پرہیزکیاجائے،اگرضرورت ہوتوایساانتظام کیا جائے جومقتدیوں کی ضرورت کے لیے کافی ہو۔فقط واللہ تعالیٰ اعلم
(بصیرت فیچرس)