کورونا کے بہانے مودی پورے ملک کو کشمیر بنانا چاہتے ہیں:

کورونا کے بہانے مودی پورے ملک کو کشمیر بنانا چاہتے ہیں: شاہنوازبدرقاسمی
ہمارے وزیراعظم نریندرمودی کوروناوائرس کے بہانے پورے ملک کو کشمیر بناناچاہتاہے جہاں ہرطرف خوف زد گی کاماحول ہے۔
کورونا ایک وبائی بیماری ہے اس میں کوئی شک نہیں لیکن کورونا کے نام پر جس طرح لوگوں کو ڈرایا،دھمکایا اور بدنام کیاجارہا ہے وہ انتہائی قابل مذمت اور ناقابلِ معافی جرم ہے۔لاکھوں لوگوں کی موت کا ذمہ دار آخر کون ہے جن کی غلطیوں کی وجہ سے ایسے حالات پیش آئے جو لوگ قصوروار ہیں ان کے خلاف ضرورکاروائی ہونی چاہئے،ہائی کورٹ اور سپریم کورٹ بھی صرف دھمکی سے کام چلارہے ہیں اب تک کسی کے خلاف کوئی قانونی کاروائی نہیں کی گئی،مرکز سے لیکرریاست اور ضلع انتظامیہ سے لیکر ہاسپٹل تک کسی کی کوئی جواب دہی طے نہیں ہے،لوک ڈاون میں ماسک کے نام پر چالان اور پولیس کی بدتمیزی و لاٹھی ڈنڈے سے لوگ پریشان ہیں،ظلم،زیادتی،ناانصافی اور خوف وہراس کاایک ایسا ماحول پیدا ہوگیاہے جہاں حق بات بولنا بھی جرم سمجھاجانے لگا ہے،بڑوں بڑوں کی بولتی بند ہے،ایک مخصوص پارٹی سے تعلق رکھنے والے کارکنان کی غنڈہ گردی سے پورا ملک پریشان ہے۔
ملک میں طبی نظام کا حال بدسےبدترہوچکاہے،ہسپتالوں میں مریضوں کو بے موت مارا جارہاہے، دیہی علاقوں میں لاکھوں مریض جھولاچھاپ ڈاکٹروں کے سہارے زندگی جی رہے ہیں،آکسیجن اور بروقت علاج نہ ہونے سے روزانہ سینکڑوں مریض مررہے ہیں،بڑی تعداد میں لوگ بے روزگار ہوچکے ہیں، یومیہ مزدوری اور پرائیوٹ نوکری کرنے والے فاقہ کشی اور ڈپریشن کے شکار ہیں،شمشان گھاٹ اور کئی قبرستانوں میں مردہ کیلے جگہ نہیں ہے، ندیوں میں لاشیں بہتے ہوئے نظر آرہے ہیں،زندگی سے لیکر موت کے بعد بھی لوگوں کواطمینان و سکون نہیں ہے ہر طرف افراتفری کا ماحول ہے۔سرکاری سطح کاکوئی کام اطمینا ن بخش نہیں ہے بس دلاسہ اور میڈیا رپورٹنگ سے سہارے اب تک حکومت کی شبیہ کو بہتر بنانے کی ہرممکن کوشش ہورہی ہے۔
کورونا قہر میں انسانی جان کو بچانے اور انسانیت کی خدمت کرنے والوں کو چن چن کر جیل میں ڈالا جارہاہے،حکومت کو زمینی سچائی بناتے اور آئینہ دیکھانے والوں کے خلاف فرضی مقدمات قائم کئے جارہے ہیں،ایسا محسوس ہوتاہے کہ اس ملک میں صرف انہیں لوگوں کو جینے کاحق حاصل جو اپنے نکمے آقاؤں کی خوشنودی کیلے سب کچھ کرناچاہتے ہیں چاہے وہ غلط ہی کیوں نہ ہو،تنقید،تبصرہ اور سچ بات سننا ہرگز گوارہ نہیں ہے۔
ہندوستان میں لاشوں پر سیاست کوئی نئی بات نہیں ہے لیکن کورونا کے بہانے عوامی طاقت کو کچلنے اورجمہوریت کے مطلب کو بدلنے کی جونا کام کوشش ہورہی ہے اس کے نتائج کااندازہ لگاناابھی مشکل ہے ابھی بھی وقت ہے اس کھیل کو سمجھنے کی ضرورت ہے اور ایک ذمہ دارشہری ہونے کے ناطے دنیا کو حقائق بتانے اور ان حالات سے نکلنے کیلے اجتماعی سطح پر غور وفکر کے بعد عملی حل تلاش کرنے کی فوری ضرورت ہے۔