اردگان آن لائن نیٹ ورکس کے خلاف کریک ڈاؤن کے خواہاں۔

ہندوستان میں کووڈ 19 متاثرین کی تعداد چھ لاکھ سے تجاوز کر گئی

آمنا سامنا میڈیا : عالمی خبریں
نامہ نگار: محمد سمیع اللہ شیخ
02٫07٫2020

ہندوستان میں کووڈ 19 متاثرین کی تعداد چھ لاکھ سے تجاوز کر گئی

ہندوستان میں کووڈ 19 سے متاثر ہونے والوں کی تصدیق شدہ تعداد چھ لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے۔ ہندوستانی
وزارت صحت کے مطابق ملک میں اب کووڈ 19 کے سبب تصدیق شدہ اموات کی تعداد 17,834 ہو گئی ہے۔
ہندوستان میں لاک ڈاؤن میں نرمی کے مرحلے کا آغاز جسے ’لاک ڈاؤن 2‘ کا نام دیا گیا ہے، پیر کے روز سے ہوا
ہے جس میں اقتصادی سرگرمیوں کی اجازت دے گئی ہے تاہم زیادہ متاثرہ علاقے بدستور لاک ڈاؤن میں رہیں گے۔
عالمی سطح پر کورونا متاثرین کی تعداد ایک کروڑ سات لاکھ کے قریب ہے جبکہ ہلاکتوں کی تعداد پانچ لاکھ 16
ہزار سے تجاوز کر چکی ہے۔
پچھلے 24 گھنٹوں میں انیس ہزار سے زائد نئے کیسز کے ساتھ ہندوستان میں کووڈ19 سے متاثرین کی تعداد چھ
لاکھ پانچ ہزار 472 ہوگئی ہے، جبکہ دنیا میں تیسرے سب سے زیادہ متاثرہ ملک روس میں متاثرین کی تعداد چھ
لاکھ 54 ہزار 405 ہے۔
برازیل 14 لاکھ سے زائد کیسز کے ساتھ دوسرے نمبر پر ہے اور امریکا 27 لاکھ سے زائد کیسز کے ساتھ پہلے
نمبر پر ہے۔ گویا بھارت روس کے مقابلے 50 ہزار سے بھی کم کیسز سے پیچھے ہے۔ لیکن چونکہ بھارت میں
روزانہ تقریباً 20 ہزار نئے کیسز سامنے آرہے ہیں اس لحاظ سے یہ اگلے چند دنوں میں روس کو پیچھے چھوڑ
سکتا ہے۔ تاہم بھارت میں کورونا سے ہونے والی اموات کی تعداد روس سے تقریباً دو گنا زیادہ ہے۔ بھارت میں اب
تک 17ہزار 850 افراد ہلاک ہوچکے ہیں جبکہ روس میں یہ تعداد 9536 ہے۔
ہندوستان میں پچھلے 24 گھنٹے میں 19148 نئے کیسز سامنے آئے اور 434 افراد کی موت ہوگئی۔ تاہم کووڈ
19سے صحت یاب ہونے والوں کی تعداد تین لاکھ 59 ہزار 860 ہے۔ یعنی 59.51 فیصد افراد صحت یاب ہوئے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسرائیل کی طرف سے فلسطینی علاقے ضم کرنے کے خلاف الفتح اور حماس متحد۔

فلسطینی گروپس الفتح اور حماس نے اسرائیل کی طرف سے مقبوضہ غرب اردن کے علاقوں کو اسرائیل میں ضم
کرنے کے منصوبے کے خلاف متحدہ مہم چلانے کا عندیہ دیا ہے۔ فتح کے ایک سینیئر اہلکار نے راملہ میں ایک
مشترکہ پریس کانفرنس میں کہا کہ قومی یکجہتی کو یقینی بنانے کے لیے تمام ضروری اقدامات کیے جائیں گے۔ اس
پریس کانفرنس میں ویڈیو لنک کے ذریعے بیروت میں موجود حماس کے اہلکار صالح العروری بھی شریک تھے۔
ویڈیو کانفرنس میں رام اللہ سے فلسطینی تنظیم الفتح کی مرکزی کمیٹی کے سیکرٹری جنرل جبریل رجوب اور لبنانی
دارالحکومت بیروت سے حماس کے سیاسی امور کے دفتر کے سربرہ صلاح العاروری نے شریک ہو کر اپنے متفقہ
نکتہٴ نظر پر اظہارِ خیال کیا۔ اس موقع پر دونوں لیڈروں نے واضح کیا کہ یہ وقت کی ضرورت ہے کہ اسرائیلی
حکومت کے مجوزہ پلان کے حوالے سے ایک قومی موقف اپنایا جائے۔ جبریل رجوب نے یہ بھی کہا کہ فلسطینی
قوم کو ایک انتہائی نازک اور سنگین صورت حال کا سامنا ہے۔ الفتح کے رہنما نے یہ بھی کہا کہ ویڈیو لنک پر
ہونے والی میٹنگ فلسطینی ریاست کے قیام کے مقصد کو ناکام کرنے کے امریکی و اسرائیلی منصوبے کو مسترد
کرنے کے لیے تھی۔ انہوں نے جمعرات دو جولائی کی میٹنگ کو قومی اتحاد کے تقاضوں کی روشنی میں درست
سمت کی جانب اٹھنے والا ایک انتہائی مثبت قدم قرار دیا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہندوستان چینی برآمدات کو ہدف بنانے کی کوشش کر رہا ہے، چین کا الزام

چین نے کہا ہے کہ ہندوستان اور چین کے درمیان سرحدی تناؤ کے تناظر میں ہندوستان ، چینی کمپنیوں کی معاشی
سرگرمیوں میں نامناسب طور پر خلل ڈال رہا ہے۔ چینی وزارت تجارت کے ترجمان کے مطابق چین نے تاہم اس
کے ردعمل میں کوئی قدم نہیں اٹھایا اور معمول کی صورتحال کی طرف واپسی میں ہی دونوں ممالک کا فائدہ ہے۔
ہندوستان نے پیر کے روز چینی کمپنیوں کی ملکیت 59 انٹرنیٹ ایپلیکیشنز پر پابندی لگا دی تھی جبکہ ایسی چینی
کمپنیوں کو بھی بلیک لسٹ کیا جا رہا ہے جو ہندوستان میں بڑے منصوبے تعمیر کر رہی تھیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
روسی صدر ولادیمیر پوٹن کی راہ ہموار۔ عوام کی اکثریت نے آئین میں ترمیم کے حق
میں ووٹ دیا۔

روس میں عوام کی اکثریت نے نئی آئینی ترامیم کے حق میں ووٹ دیا ہے۔ روسی الیکشن کمیشن کے مطابق اس
ریفرنڈم میں ڈالے گئے ووٹوں کی گنتی 90 فیصد تک مکمل ہو گئی ہے جن میں سے 78 فیصد نے نئے آئین کے
حق میں ووٹ دیا ہے۔ ووٹ ڈالنے کی شرح 65 فیصد رہی۔ آئینی ترامیم کے نتیجے میں 67 سالہ روسی صدر
ولادیمیر پوٹن 2036ء تک عہدہ صدارت پر براجمان رہ سکتے ہیں۔ کریملن کے ناقد الیکسی نیوالنی نے ان تنائج کو
ایک ’بڑا جھوٹ‘ قرار دیا ہے۔
روسی الیکشن کمیشن کے مطابق 78 فیصد سے زائد ڈالے گئے ووٹوں کی گنتی مکمل ہو چکی ہے اور بھاری
اکثریت میں لوگوں نے دستوری ترامیم کی منظوری دی ہے۔ ریفرنڈم میں پیش کردہ آئینی ترامیم کی مخالفت میں
اکیس فیصد ووٹ ڈالے گئے۔ ریفرنڈم کا ٹرن آؤٹ پینسٹھ فیصد رہا۔ روسی پارلیمنٹ دستوری اصلاحات کے پیکج کی
باضابطہ منظوری پہلے ہی دے چکا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سلامتی کونسل نے ’کورونا قرارداد‘ منظور کر لی ۔

اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے اس قرارداد کو متفقہ طور پر منظور کر لیا ہے کہ کورونا کی وبا کے سبب پیدا
شدہ عالمی بحران کے دوران مسلح تنازعات کا سلسلہ روکا جائے۔ اس قرارداد کے متن پر امریکا اور چین کے مابین
تنازعہ چلا آ رہا تھا کہ اس میں عالمی ادارہ صحت کا تذکرہ شامل کیا جائے یا نہیں۔ تین ماہ سے زیادہ عرصے سے
بحث و مباحثے کے بعد سلامتی کونسل نے بالآخر یہ قرارداد جرمنی کی سربراہی میں منظور کرلی ہے۔ جرمنی نے
بدھ یکم جولائی سے ایک ماہ کے لیے سلامتی کونسل کی صدارت سنبھالی ہے۔
کورونا کے بحران کے دوران دنیا بھر میں ہتھیاروں کی خاموشی کو یقینی بنانے سے متعلق قرارداد کی منظوری
دے کر سلامتی کونسل نے مہینوں سے امریکا اور چین کے مابین  تنازعے کا باعث بنے ہوئے ایک اہم موضوع
پرعالمی برادری کی تشویش دور کرنے کی کوشش کی ہے۔ یہ امر جرمنی کے لیے غیر معمولی اہمیت کا حامل ہے
کیونکہ یہ یورپی ملک اس وقت سلامتی کونسل کی قیادت کر رہا ہے۔
تین ماہ سے زیادہ عرصے سے بحث و مباحثے کے بعد، اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے متفقہ طور پر متنازعہ
کورونا قرار داد کو منظور کر لیا ہے۔ یہ جرمنی کے لیے ایک خوش آئند امر ہے کیونکہ بدھ یکم جولائی سے ایک
ماہ کے لیے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کے صدرارت جرمنی نے سنبھالی ہے۔ جرمنی کے لیے یہ ایک کامیاب
آغاز کی علامت ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جرمنی نے مغربی کنارے کے علاقوں کو ضم کرنے کا اسرائیلی منصوبہ مسترد کر دیا

جرمن پارلیمان نے اسرائیل سے غرب اردن کے مقبوضہ علاقوں کو اسرائیل میں ضم کرنے کے اپنے منصوبوں
سے باز رہنے کو کہا ہے تاہم اس نے اسرائیل کے خلاف پابندیاں نافذ کرنے سے بھی انکار کر دیا ہے۔
جرمن پارلیمان نے فلسطینی علاقے غرب اردن کو اسرائیل میں ضم کرنے کے منصوبے کو عالمی قوانین کی خلاف
ورزی قرار دیتے ہوئے اسرائیل کو اس سے باز رہنے کا کہا ہے۔ پارلیمان میں اس سے متعلق قرارداد انگیلا میرکل
کی مخلوط حکومت میں شامل تین سیاسی جماعتوں نے پیش کی جسے متفقہ طور پر منظور کر لیا گیا۔ قرارداد کے
مطابق غرب اردن کو ضم کرنے کے اسرائیلی منصوبے سے اسرائیل کی سکیورٹی اور دو ریاستی حل کا منصوبہ
خطرے میں پڑ سکتا ہے۔ جرمن وزیر خارجہ ہائیکو ماس کا کہنا ہے کہ اسرائیل کے اس منصوبے سے مشرقی
وسطی میں پورے خطے کی سکیورٹی خطرے میں پڑ سکتی ہے۔
جرمن وزیر خارجہ ہائیکو ماس کا کہنا ہے کہ اسرائیل کے اس منصوبے سے مشرقی وسطی میں پورے خطے کی
سکیورٹی خطرے میں پڑ سکتی ہے۔ ان کا کہنا تھا، ''یک طرفہ کارروائیوں سے امن نہیں حاصل کیا جا سکتا۔'' لیکن
اے ایف ڈی کا کہنا تھا کہ غرب اردن کا انضام اسرائیل کے قومی مفاد میں ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اردگان آن لائن نیٹ ورکس کے خلاف کریک ڈاؤن کے خواہاں۔

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے ملک میں آن لائن پلیٹ فارمز پر کنٹرول بڑھانے کا اعلان کیا ہے۔ اپنی جماعت
اے کے پی کے ارکان سے ویڈیو لنک کے ذریعے خطاب کرتے ہوئے ایردوآن نے یوٹیوب، ٹویٹر اور نیٹ فلکس
جیسے میڈیا سے ’فحاشی اور بداخلاقی‘ کے خاتمے کی خواہش ظاہر کی۔ خیال رہے کہ سوشل میڈیا پر ایردوآن کے
خاندان خاص طور سے ان کی بیٹی کو توہین کا نشانہ بنایا گیا ہے جن کے ہاں حال ہی میں چوتھے بچے کی پیدائش
ہوئی۔ اس الزام میں 11 مشتبہ افراد کو حراست میں بھی لیا گیا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

کورونا وائرس کی مار اور ٹڈیوں کے حملوں سے پریشان، بھارت کے کسان

بھارت کے کسان ان دنوں دوہری مار جھیل رہے ہیں۔ کورونا کی وجہ سے ان کی فصلوں کے مناسب خریدار نہیں
مل رہے ہیں تودوسری طرف ٹڈیوں کے حملوں نے رہی سہی کسر پوری کردی ہے۔
حالانکہ حکومت کا دعوی ہے کہ کسانوں کو ان دونوں مصیبتوں سے نکالنے کے لیے متعدد اقدامات کیے جارہے
ہیں لیکن زمینی حقیقت اس سے یکسر مختلف ہے۔ بھارت میں حکومت نے مئی کے اوائل میں کسانوں کے لیے
اقتصادی پیکج کا اعلان کیا تھا جس میں فصلوں اور زرعی سازو سامان کے لیے بینکوں سے آسان قرض شامل تھا۔
تاہم کسانوں سے وابستہ گروپ، غیر حکومتی تنظیموں اورماہرین کا کہنا ہے کہ اس پیکج سے کسانوں کو کسی
طرح کی فوری راحت ملنے والی نہیں ہے اور اس سے زرعی سیکٹر سے وابستہ مزدوروں کے فوری مسائل حل
ہونے والے نہیں ہیں۔
کسانوں کے حقوق کے لیے سرگرم بھارتیہ کسان یونین کے قومی سکریٹری یدھ ویر سنگھ کا خیال ہے کہ حکومت
کے امدادی پیکج سے لاک ڈاون کے دوران کسانوں کوہونے والے نقصان کی بھرپائی نہیں ہوسکے گی۔”پھل او ر
سبزیاں اگانے والے کسان تباہ ہوچکے ہیں کیوں کہ لاک ڈاون کی وجہ سے سپلائی چین ٹوٹ گئی ہے۔ کسانوں کو
گیہوں ایک ہزار سے بارہ سو روپے فی کوئنٹل کے بھاو سے فروخت کرنے کے لیے مجبور ہونا پڑ رہا ہے۔"
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

ہندوستان میں 'ٹک ٹاک اسٹارز' کی آمدنی بند

ہندوستان کی جانب سے چین کی موبائل ایپلی کیشن 'ٹک ٹاک' پر پابندی سے اس کے 'اسٹارز' کی آمدنی بند ہو
گئی ہے اور اُن میں مایوسی کا احساس بڑھنے لگا ہے۔
ٹک ٹاک بھارت میں ناصرف سینکڑوں افراد کی آمدنی کا بڑا ذریعہ تھی بلکہ کروڑوں افراد کے لیے تفریح کا باعث
بھی تھی۔ ہندوستان نے ٹک ٹاک سمیت چین کی درجنوں ایپس کو ملکی سلامتی کے لیے خطرہ قرار دیتے ہوئے
منگل کو ان پر پابندی عائد کر دی تھی۔ ہندوستان میں ٹک ٹاک مقبول ترین موبائل ایپلی کیشنز میں سے ایک ہے۔ یہ
چینی کمپنی 'بائٹ ڈانس' کی ملکیت ہے جو بھارت میں ایک بلین سرمایہ کاری کی منصوبہ بندی کر رہی تھی۔ یہ
مارکیٹ میں بہت تیزی سے آگے بڑھ رہی تھی۔ اس کے ملازمین کی تعداد 2000 بتائی جاتی ہے۔
ممبئی کی گیتا شری دھر ایسی ہزاروں خواتین میں شامل ہیں جو اپنے اسمارٹ فون کے بغیر کچن میں داخل نہیں
ہوتی تھیں۔ 54 سالہ گھریلو خاتون ٹک ٹوک پر روزانہ درجنوں مختصر ویڈیو اپ لوڈ کیا کرتی تھیں جن میں زیادہ
تر کھانا پکانے کی روایتی ترکیبیں بتائی جاتی تھیں۔ ان کے فالورز کی تعداد ایک کروڑ سے زائد تھی اور وہ ٹک
ٹاک سے ماہانہ 50 ہزار روپے کمایا کرتی تھیں۔ آمدنی کے بند ہوجانے سے اُنہیں دھچکا لگا ہے۔
'ٹک ٹاک' شری دھر جیسی ہزاروں بھارتی خواتین اور مردوں کے لیے شہرت اور خوش قسمتی کی علامات بنی
ہوئی تھی۔ لیکن دو روز قبل لگنے والی پابندی سے ہزاروں ٹک ٹاک اسٹارز اور ان کے فالوورز پریشان ہو گئے
ہیں۔