کورونا وائرس امریکی فوج میں بھی پھیلتا ہوا

امریکی بحریہ نے کورونا وائرس سے متاثرہ طیارہ بردار بحری جہاز کے کمانڈر کو برطرف کر دیا ہے۔ اس کمانڈر نے حکام کو ایک خط لکھتے ہوئے کورونا وائرس کی وبا کو کنٹرول کرنے کے لیے کارروائی کی اپیل کی تھی

امریکی بحریہ کی طرف سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق طیارہ بردار جنگی بحری جہاز تھیوڈور روزویلٹ کے کیپٹن بریٹ کروزیر کو برطرف کر دیا گیا ہے۔ بحریہ کے اس کمانڈر نے حکام کو خط لکھا تھا کہ جہاز پر کورونا وائرس کے مریض فوجیوں کی تعداد بڑھتی جا رہی ہے اور فوری طور پر کارروائی کی اشد ضرورت ہے۔ ان کا یہ خط لیک ہو گیا تھا اور یہ خبر میڈیا پر شائع ہو گئی تھی۔

قام مقام نیوی سیکریٹری تھامس موڈلی نے کہا ہے کہ بحران کے بالکل وسط میں کیپٹن نے انتہائی غیرذمہ دارانہ اور ناقص فیصلہ کیا تھا۔ تھامس موڈلی کا کہنا تھا کہ کیپٹن نے میمو کو بہت لوگوں تک بھیج دیا تھا اور انہی میں سے کسی ایک نے اسے کیلیفورنیا نیوز پیپر تک پہنچایا، جہاں سے یہ خبر دیگر میڈیا اداروں تک پہنچی۔

دوسری جانب قائم مقام نیوی سیکریٹری تھامس موڈلی کی طرف سے کیپٹن کو برطرف کرنے کے فیصلے کو فوری طور پر تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔ ہاؤس آرمڈ سروسز کمیٹی کے اراکین نے کہا ہے کہ یہ فیصلہ ایک “غیر مستحکم فیصلہ” ہے، اس برطرفی کے فیصلے سے یہ پیغام جاتا ہے کہ سروسز اراکین کی زندگیاں اہم نہیں ہیں۔

تاہم تھامس موڈلی اپنے اس فیصلے پر قائم ہیں۔ جمعرات کو صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ کیپٹین کو براہ راست اپنے اعلی کمانڈر سے رابطہ کرنا چاہیے تھا، جو کہ پہلے ہی متاثرہ طیارہ بردار جہاز کو دوسری جگہ منتقل کرنے کی کوششوں میں مصروف تھے۔ موڈلی کا مزید کہنا تھا، “بریٹ کروزیر نے یہ کہتے ہوئے ہلچل مچا دی تھی کہ بحری جہاز کے پچاس اہلکار ہلاک ہو سکتے ہیں۔