وزارت کو لے کر شیوسینا ناراض، امت شاہ سے وزارت بدلنے کا کیا مطالبہ


جے ڈی یو کے بعد اب خبر ہے کہ شیوسینا اپنے وزارتی قلمدان کو لے کر بی جے پی سے ناراض ہے اور اس تعلق سے شیوسینا لیڈران نے
امت شاہ سے شکایت کی ہے۔

وزیر اعظم نریندر مودی کی دوسری پاری کی حلف برداری تقریب کے وقت سے ہی اتحادی پارٹیوں میں ناراضگی کی باتیں شروع ہو گئی تھیں۔ پہلے جنتا دل یو نے کابینہ سے علیحدہ رہنے کا اعلان کیا اور پارٹی سربراہ اور بہار کے وزیر اعلی نتیش کمار نے اپنی ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ مرکزی کابینہ میں علامتی شرکت کے خلاف ہیں۔ ادھر بی جے پی نے اپنا دل کی انوپریا پٹیل کو بھی کوئی وزارت نہیں دی ہے۔ اب شیوسینا جس کو وزارت دی ہے وہ اپنے قلمدان سے خوش نہیں ہے۔

مرکزی کابینہ میں شیوسینا کو بھاری صنعت کی وزارت دی گئی ہے لیکن وہ اس وزارت سے خوش نہیں ہے اور ذرائع کے مطابق شیوسینا کے سینئر رہنماؤں نے اس تعلق سے امت شاہ سے ملاقات کر کے اپنی ناراضگی درج کرائی ہے۔ مہاراشٹر اسمبلی انتخابات سے پہلے شیوسینا نے بی جے پی سے وزارت بدل کر دوسری وزارت دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

واضح رہے شیو سینا سے اروند ساونت کو مرکزی کابینہ میں جگہ دی گئی ہے اور انہیں بھاری صنعت کی وزارت دی گئی ہے۔ حلف برداری تقریب کے وقت شیوسینا کو کوئی ناراضگی نہیں تھی لیکن اب اچانک انہوں نے یہ ناراضگی درج کرائی ہے۔ اس سے قبل لوک سبھا انتخابات سے پہلے بھی شیو سینا نے کافی ناراضگی دکھائی تھی اور اکیلے انتخابات لڑنے کا شور مچایا تھا لیکن بعد میں بی جے پی کے ساتھ ملکر ہی چناؤ لڑی تھی۔

واضح رہے مرکزی کابینہ میں صوبہ مہاراشٹر سے سات لوگوں کو شامل کیا گیا ہے جس میں شیوسینا سے اروند ساونت ہیں جبکہ بی جے پی سے نتن گڈکری، پرکاش جاوڈیکر، پیوش گوئل، راؤ صاحب دانوے، رام داس اٹھاولے اور سنجے گھوترے ہیں۔