امیر شریعت کے عزم کی تصویر بننے کے لئے گاندھی میدان چلیں ۔ مشہور سیاسی وسماجی لیڈر آفتاب عالم کی مسلمانوں سے اپیل ۔

جالے ۔13/اپریل (ارشد فیضی)
ملک اس وقت نہ صرف نازک دور سے گزر رہا ہے بلکہ مرکزی حکومت اس کے جمہوری اقدار کی پامالی کے تانے بانے تیار کر رہی ہیں ایسی صورت حال میں دین بچاو دیش بچاو کانفرنس کے لئے امیر شریعت کی طرف سے اٹھایا گیا قدم ملک میں مسلمانوں کے بہتر مستقبل کی ضمانت ثابت ہوگی یہ باتیں مشہور سیاسی وسماجی لیڈر اور مدرسہ مصباح العلوم بدھنگرہ کے سکریٹری آفتاب عالم نے اپنے ایک تاثراتی بیان میں کہیں انہوں نے اس نمائندہ سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ملک کے نازک ترین حالات میں بھی امیر شریعت مولانا سید محمد ولی رحمانی نے شریعت کے تحفظ کے لئے نہایت حوصلہ افزا فیصلہ لیا ہوا ہے اس لئے مسلمانوں کی یہ ذمہ داری ہے کہ وہ امیر کے عزم کی تصویر بننے کے لئے پٹنہ کے گاندھی میدان میں اپنی حاضری کو یقینی بنانے کی فکر کریں تاکہ حکومت تک مثبت پیغام جا سکے انہوں نے کہا کہ ابھی ہوش کے ناخن نہ لئے گئے اور ہم نے حکومت کی جانب سے شریعت پر ہورہے حملے کے خلاف آواز نہ اٹھائی تو ہماری آئندہ نسلوں کا دینی مستقبل اس ملک میں محفوظ نہیں رہ پائے گا انہوں نے کہا کہ میں نے دین بچاو دیش بچاو کانفرنس کے تعلق سے مسلمانوں میں جو بیداری اب تک دیکھی ہے وہ پہلے کبھی نظر نہیں آئی اس لئے میں مکمل اعتماد سے کہتا ہوں کہ یہ کانفرنس اپنی نوعیت کی منفرد ثابت ہوگی اور امیر کے خواب کی تکمیل کو نئی جہت ملے گی آفتاب عالم نے کہا کہ آزادی کے بعد جب بھی اس ملک میں شریعت پر حملے ہوئے ہمارے بڑوں نے اس کا ہمیشہ پوری قوت سے نوٹس لے کر حکومت کو اپنے منصوبے پر از سر نو سوچنے کے لئے مجبور کر دیا اس لئے ہمیں حالات سے گھبرانے کی بجائے ایمانی قوت کے ساتھ جمہوری طریقے سے اپنے حقوق کے لئے آواز اٹھانی ہوگی ورنہ اگر ہم خاموش رہ گئے تو آنے والے وقت میں ہمارا دین پر باقی رہنا مشکل ہوجائے گا انہوں نے کہا کہ اس ملک میں مسلمانوں کے سامنے بہت سے حالات آئے ہیں مگر یہ قوم اب تک اس لئے اپنے مذہبی امتیاز کے ساتھ قائم ہے کہ انہوں نے اپنی شریعت سے کبھی سمجھوتہ نہیں کیا اور نہ ہی حکومت کے کسی ارادے کے سامنے گھٹنے ٹیکے اور اگر آج بھی مسلمان شریعت سے اپنے رشتے کو مضبوط کر کے امیر کی اطاعت شروع کر دے تو دنیا کی کوئی طاقت ان سے آنکھ نہیں ملا سکتی انہوں نے صاف لفظوں میں کہا کہ جمہوریت ہندوستان کی پیشانی کا خوبصورت سندور ہے اگر اس کو مٹانے کی سازش رچی گئی تو یہ ملک ٹوٹ جائے گا اس لئے ہر سیکولر فرد کی ذمہ داری ہے کہ وہ ملک میں جنم لے رہے نفرت کی فضا کو ختم کرنے لئے آئین کی بقاء کو یقینی بنانے کا بیڑا اٹھائے ورنہ سچ تو یہ ہے کہ یہاں جس طرح کی ذہنیت کام کر رہی ہے اگر اس کو بریک نہ لگایا گیا تو ہم دنیا کو اپنی حیثیت کا احساس نہیں دلا پائیں گے انہوں نے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ مسلمان اپنے تمام مسلکی اختلاف کو بھول کر آپسی اتحاد کا مظاہرہ کریں اس کے بغیر کسی بھی خوشگوار نتیجے تک پہونچنا دشوار ہو جائے گا آفتاب عالم نے امید جتاتے ہوئے کہا کہ 15 اپریل کی دین بچاو دیش بچاو کانفرنس تاریخی ثابت ہوگی اور اس کا پیغام دور تک جائے گا لیکن اس کے لئے مسلم قوم کو دینی بیداری کا ثبوت دینا ہوگا.